اسلام آباد(13فروری2015) کابینہ کمیٹی برائے نجکاری نے وزیر خزانہ اسحاق ڈار کی زیر صدارت منعقدہ اجلاس میں نیشنل پاور کنسٹرکشن کارپوریشن لمیٹڈ کی فروخت کے لیے سودا کاری کے طریقہ کار(Transaction Structure)کی منظوری دے دی۔اجلاس میں وفاقی وزیر منصوبہ بندی و ترقیات احسن اقبال وفاقی وزیر برائے پٹرولیم و قدرتی وسائل شاہد خاقان عباسی ، وفاقی وزیر تجارت خرم دستگیر خان، سرمایہ کاری بورڈ کے چیئرمین مفتاح اسماعیل اور دوسرے اعلیٰ حکام نے شرکت کی۔
چیئرمین نجکاری کمیشن محمد زبیر نے وزیر خزانہ اور کمیٹی ارکان کو بتایا کہ نیشنل پاور کنسٹرکشن کارپوریشن میں حکومت پاکستان کے حصص کی بہترین فروخت کے لیے مالیاتی مشیروں کا تقرر ہو چکا ہے جن میں مسلم کمرشل بینک اور حبیب بینک لمیٹڈ شامل ہیں۔ ان مالیاتی مشیروں نے اپنے تجربے اور مارکیٹ کی حوصلہ افزاء صورتحال کے پیش نظر نیشنل پاور کنسٹرکشن کمپنی لمیٹڈ میں حکومت پاکستان کے اکثریتی حصص کی فروحت(Strategic Sale)کی تجویز دی۔
یاد رہے کہ حکومت پاکستان نے یہ ادارہ1974میں قائم کیا۔ وزارت پانی و بجلی کے ماتحت قائم کیے جانے والے اس ادارے کا بنیادی مقصد نہ صرف ملک کے اندر بلکہ دوست ممالک میں پاور انجینئرنگ کے منصوبوں پر تیز رفتاری اور کم اخراجات کے ساتھ عمل درآمد کرنا ہے۔
یہ کارپوریشن مختلف قسم کے بجلی کے منصوبے تیزرفتاری کے ساتھ مکمل کر کے چال حالت میں دینے کی پوری صلاحیت کی حامل ہے۔ ایسے منصوبوں میں ایکسٹر ہائی وولیٹج ٹرانسمیشن لائنز،کیبل نیٹ ورکس، ایل وی ڈسڈی بیوشن نیٹ ورک سب سٹیشنز کا قیام، صنعتوں میں بجلی کا نظام لگانا، اور بڑی رہائشی عمارتوں میں بیرونی روشنی کے انتظامات وغیرہ کرنا شامل ہیں۔یہ ادارہ گذشتہ تین دہائیوں سے زیادہ عرصے سے میدان عمل میں اپنی کارکردگی کا لوہا منوا رہا ہے۔

Leave Comment